Cloud Front
Asif ALi Zardar Return

زرداری کی واپسی ، کیا 27 دسمبر کو دمادم مست قلندر ہوگا ؟

پاکستان پیپلزپارٹی کے شریک چیئرمین سابق صدر آصف علی زرداری خود ساختہ جلاوطنی کاٹ کر 23 دسسمبر کو وطن واپس لوٹ رہے ہیں پس منظر میں جایا جائے تو وہ جن وجوہات کی بنیاد پر ملک سے راہ فرار اختیار کرکے گئے تھے ان میں سر عام فوج کو للکارنا تھا کراچی میں آپریشن اور عسکری ونگز کے خلاف فوج کی کاروائیاں سابق صدر کے لئے درد سر تھیں بلکہ وبال جان. اب ان کی آمد ان کا اسٹبلشمنٹ کے لئے مشہور جملہ ” آپ تین سال کے لیے آتے ہیں اور آپ نے چلے جانا ہے جب کہ ہم نے ہمیشہ یہاں رہنا ہے” کے مصداق ہے

اس وقت آصف علی زرداری کی ملکی سیاست میں انٹری اور سیاسی گراؤنڈ انتہائی اہمیت کی حامل ہے اس وقت ان کو سب سے زیادہ للکارنے والی پاکستان تحریک اںصاف بھی ان کی آمد پر پاناما کیس اور نواز شریف کے احتساب کی خاطر مصلحت کےتحت خاموش ہے ، ماضی میں ان سے مک مکا کرکے سیاسی طور پر کراچی میں فوائد حاصل کرنے والی ایم کیو ایم بھی پارٹی کے آپس کے خلفشاروں میں دھنسی ہوئی ہے دوسری جانب مسلم لیگ ن جن کے خلاف وہ محاذ کھڑا کرنے آرہے ہیں وہ بھی کھل کر سابق صدر کے خلاف نہیں بول سکتے، تاہم ان کی پارٹی میں وزیر اعظم کی کچن کیبنٹ سمیت ایسے لوگ ہیں جو چاہتے ہیں کہ سابق صدر کو آڑے ہاتھوں لیاجائے جن میں‌چوہدری نثار سر فہرست ہیں جس کی بدولت پیپلزپارٹی کے حکومت کے لئے چار نکات میں چوہدری نثار کا وزارت سے استعفیٰ بھی شامل ہے

اب دیکھنا یہ ہے کہ آصف زرداری 27 دسمبر سے پہلے چار مطالبات کے پس پردہ سیاسی فوائد حاصل کرنے میں کامیاب ہوتے ہیں یا پھر 27 دسمبر کو دمادم مست قلند کا سیاسی شو سجاتے ہیں

لیکن اس وقت 27 دسمبر کا جلسہ ہوتا ہوا نظر نہیں آرہا، کیونکہ ماہرین کی رائے کے مطابق بلاول کو سکرپٹ بھی سابق صدر کی جانب سے ہی مہیا کیا جاتا ہے جس پر بلاول فرنٹ لائن پر کھیلتے ہیں اور آصف زرداری بیک فٹ پر سیاسی عزائم پورے کریں گے جن میں‌ ڈاکٹر عاصم حسین کیس اس کے بعد ڈالر گرل آیان شامل ہیں

اس کے علاوہ امکان ہے کہ سابق صدر 23 دسمبر سے سیاسیت میں عملی طورپر حصہ لیتے ہوئے آئندہ انتخابات کے لئے بھی ہوم کرنا شروع کردیں گے