Cloud Front
Nawaz Sharif

گول گپوں اور دہی بھلوں‌ کا صدقہ صدارت…!‌

عام طور پر تو کسی کی آنکھوں کا تارہ بننے کے لئے مردم شناسی کا فن ضروری جانا جاتا ہے لیکن یہاں پر صورتحال مختلف ہے موجودہ وزیر اعظم کی طبع خوراک کو دیکھا جائے تو معدہ شناسی کا فن بازی لے جاتا ہے جس کے تحت صدر ممنو ن حسین اپنی دلپذیر ڈشوں کے ذریعے معدے کے راستے میاں نواز شریف کے دل میں جگہ بنا گئے ۔بالخصوص گول گپے اور دہی بھلے .

90کی دہائی میں کراچی کے کپڑا کے کاروبار سے وابستہ ممنون حسین غوث علی شاہ و دیگر کے ذریعے نواز شریف کے جانثاروں میں شامل ہو گئے تن من دھن سے ان کی خدمت کرتے کراچی میں آتے تو دہی بھلوں اور گول گپوں سے تواضع کرتے ویسے تو عمومی تاثر میں یہ کہا جاتا ہے کہ گول گپے مردوں کی نسبت عورتوں کو زیادہ پسند ہیں تاہم صدر ممنون کے پاس ایسا گول گپے بنانے والا تھا جو میاں نواز شریف کے دل کو بھا گیا اور وہ اپنا معدہ ممنون حسین پر قربان کر بیٹھے جس کے لئے یہ مثال ہی کافی ہے کہ جن کے ذریعے وہ پارٹی میں پہلی دفعہ سبقت لے کر گئے جب99میں چوہدری شجاعت حسین کے گھر پر انہیں پہلی دفعہ گول گپوں اور دہی بھلوں کی تاثیر دکھاتے ہوئے گورنر بنانے کا فیصلہ کیا گیا

اس کے بعد ممنون حسین نے حقیقتاً گول گپوں اور دہی بھلوں کی اہمیت کو محسوس کرتے ہوئے گول گپے اور دہی بھلے خود بنانے کا طریقہ آزمانے کی کوشش کی اور گورنر ہاؤس میں یہی پریکٹس کرتے رہے جو بعد میں کام آئی اور وہ اٹک جیل میں سپیشل ؂ گول گپے اور دہی بھلے لیکر جایا کرتے تھے جس پر ممون حسین کی محبت اور ایثار کو دیکھ کر بعض اوقات میاں نواز شریف آبدیدہ بھی ہوجا یا کرتے تھے کہ کوئی اس حد تک میرا جیالا ہے یہ ان دہی بھلوں اور گول گپوں کا ہی صدقہ ہے جس کی بدولت آج وہ مسند صدارت پر بیٹھے ہیں ممکنات میں سے ہے کہ وہ اس وقت بھی ایوان صدر میں گول گپوں اور دہی بھلوں کے ساتھ کسی نئی ڈش کی پریکٹس کر رہے ہونگے ۔

خوش خوراکی کا یہ سلسلہ بہت دور تک جاتا ہے کراچی کی ہی ایک معروف شخصیت میاں صاحب کے دل کو صرف اس لئے لبھاتی ہیں کہ وہ قلفی بہت اچھی کھلاتے ہیں اسی طرح لاہور کے ایک پہلوان طبیعت کے مالک لسی والے لسی میں تو میاں صاحب کی جیسے جان ہے ایک دفعہ کا ذکر ہے پی آئی اے کا سفرکر رہے تھے کھانے کے بعد لسی نہ پیش کی گئی تو طبیعت خوش خوراک پر ناگوار گزری جس پر اسی وقت حکم صادر کیا کہ پی آئی اے کے مینیو میں لسی بھی شامل کی جائے جس پر ٹینڈر بھی دیے گئے جس پر اعتزاز احسن آن دی فلور فرماتے ہیں کہ ہمیں لسی کے اتنے بڑے بڑے گلاس پینے پڑے۔
لاہور کی لکشمی مارکیٹ کی ایک مشہور سویٹ ہاؤس کے سموسے جن کے لئے شدید جھاڑے کے موسم میں مرسڈیز بھیج دی جاتی ہے اور وہ پانی میں ڈوب جاتی ہے بعد میں اس کی مرمت پر پانچ لاکھ روپے خرچ ہوتے ہیں اگر آپ دسترخوان سے ناواقف ہیں تو سابق صدر آصف علی زرداری کی دعوت شیراز ہی دیکھ لیجئے ۔