Cloud Front
axact

جعلی ڈگری کیس: امریکا میں ایگزیکٹ کے افسر پر فرد جرم عائد

نیویارک: امریکا کی وفاقی عدالت کی جانب سے جعلی ڈگریاں جاری کرنے والے 140 ملین امریکی ڈالرز کے کیس میں ایگزیکٹ کے ایگزیکٹو افسر پر فردِ جرم عائد کر دی گئی ہے

فرد جرم ایگزیکٹو آفیسر حامد پر عائد ہوئی جن کی عمر 30 سال ہے
غیر ملکی خبر رساں ایجنسیوں‌کے مطابق عمیر حامد پر عدالت میں‌الزام تھا کہ انہوں نے سازش کے تحت فراڈ کے ذریعے جعلی ڈگریاں جاری کیں جس سے ہزاروں افراد متاثر ہوئے

امریکی اٹارنی پریت برارا کی جانب سے جاری کیے بیان کے مطابق ایگزیکٹ کے افسر عمر حامد کو تین دن قبل گرفتار ہوئے تھے

بیان میں کہا گیا ہےکہ ایگزیکٹ کے پاکستان میں بند ہونے کے باوجود امریکہ میں لوگوں کو ڈگریاں جاری کی جاتی رہی ہیں

پریت برارا کے بیان میں مزید کہا گیا کہ عمر حامد نے تعلیم حاصل کرنے کی خواہش رکھنے والے امریکی نوجوان مردوں اور خواتین سے بیکار کاغذ کے ٹکڑے کے بدلے براہ راست بھاری فیس وصول کی۔

خیال رہے کہ پاکستانی حکومت نے گزشتہ سال امریکی حکومت کو جعلی ڈگری کیس میں تحقیقات کے لیے مدد کی درخواست کی تھی، ایگزیکٹ پر لاکھوں ڈالرز کی آن لائن یونیورسٹیز کی جعلی ڈگریاں جاری کرنے کا الزام لگایا گیا تھا۔

Manhattan U.S. Attorney Charges Executive Of Axact In $140 Million Diploma Mill Scam