Cloud Front
Romanian president

رومانیہ میں وزارتِ عظمی کی مسلم خاتون امیدوار کی نامزدگی مسترد

نامزدگی مسترد ہونے کی ممکنہ وجوہ ان کا خود مسلمان ہونا جبکہ ان کے شامی نڑاد شوہر کا سیاسی طور پر بشار الاسد کا حمایتی ہونا بھی ہوسکتی ہیں

بخارسٹ: رومانیہ کے صدر کلاز ایوہانس نے وزارتِ عظمی کیلئے بائیں بازو سے تعلق رکھنے والے سوشل ڈیموکریٹس کی مسلم خاتون امیدوار سیول شائدہ کی نامزدگی کو مسترد کردیا ہے۔اگر سیول شائدہ کی نامزدگی مسترد نہ کی جاتی تو وہ یورپی یونین کے کسی بھی ملک کی پہلی خاتون اور اولین مسلمان وزیراعظم ہوتیں، تاہم ایوہانس نے ان کی نامزدگی مسترد کرنے کی کوئی وجہ نہ بتاتے ہوئے بائیں بازو کی سیاسی جماعتوں کے اتحاد ’’پی ایس ڈی‘‘ سے کہا ہے کہ وہ اس عہدے کیلئے اپنا کوئی اور امیدوار تجویز کرے۔واضح رہے کہ رومانیہ کے حالیہ انتخابات میں پی ایس ڈی 465 میں سے 250 نشستیں حاصل کرکے حکومت بنانے کی پوزیشن میں آگیا ہے

اور اسی اتحاد نے 52 سالہ ترکی نڑاد سیول شائدہ کو وزارتِ عظمی کیلئے نامزد کیا تھا لیکن رومانیہ کے صدر نے یہ نامزدگی مسترد کردی ہے۔سیاسی مبصرین کا کہنا ہے کہ شائدہ کی نامزدگی مسترد ہونے کی ایک ممکنہ وجہ ان کا مسلمان ہونا جبکہ دوسری وجہ ان کے شامی نڑاد شوہر کی سیاسی وابستگی بھی ہوسکتی ہے کیونکہ وہ سوشل میڈیا پر بشارالاسد کے حامیوں میں شامل ہیں اور وقتاً فوقتاً ان کے حق میں پوسٹیں لگاتے رہتے ہیں۔کلاز ایوہانس کی جانب سے سیول شائدہ کو بطور وزیراعظم مسترد کرنے کے فیصلے پر ردِعمل دیتے ہوئے پی ایس ڈی کی قیادت کا کہنا ہے کہ وہ اس پر صدر کا مواخذہ کرنے کے بارے میں غور کرسکتے ہیں کیونکہ اس سے پہلے کسی صدر نے نامزد وزیراعظم کو کبھی مسترد نہیں کیا۔