Cloud Front

اومان نے دہشت گردی کے خلاف قائم اسلامی اتحاد میں شمولیت اختیا ر کر لی

اومان کی شمولیت سے اسلامی عسکری اتحاد مزید موثر اور نتیجہ خیز انداز میں اپنا سفر جاری رکھے گا،سعودی عرب کا خیر مقدم

دبئی: خلیجی ریاست سلطنت آف اومان سعودی عرب کی قیادت میں قائم دہشت گردی کے خلاف اسلامی ممالک کے فوجی اتحاد میں شامل ہوگئی ہے۔خیال رہے کہ سعودی عرب کے نائب ولی عہد اور وزیر دفاع شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز نے دسمبر 2015ء کو عرب اور مسلمان ملکوں کے ایک فوجی اتحاد کی تشکیل کا اعلان کیا تھا۔ مسلمان ملکوں کے فوجی اتحاد کی تشکیل کا مقصد عالم اسلام اور عالمی برادری کو درپیش دہشت گردی کے خطرات سے نمٹنا اور دہشت گردی کی بیخ کنی کے لیے جاری کوششوں کو مجتمع کرنا تھا۔اسلامی عسکری اتحاد کا صدر دفتر ریاض میں قائم کیا گیا ہے۔ ابتدائی طور پر اس اتحاد میں 34 عرب اور مسلمان ملکوں نے شمولیت اختیار کی تھی۔

دہشت گردی کے خلاف تشکیل پانے والے اسلامی اتحاد میں برادر مسلمان ملکوں کے درمیان دہشت گردی کے خلاف جنگ کے لیے رابطہ کاری کیفروغ، جدید جنگی وسائل کے استعمال، انسداد دہشت گردی کے لیے فوجی صلاحیتوں میں اضافہ اور عالم اسلام کی سلامتی کو درپیش مسائل سے نمٹنے کے لیے مشترکہ اقدامات کرنے پر زور دیا گیا تھا۔سعودی عرب کی سرکاری پریس ایجنسی ’واس‘ کے مطابق سعودی عرب کے نائب ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کو سلطنت آف اومان کے وزیر دفاع بدر بن سعید البوسعیدی کی جانب سے ایک پیغام موصول ہوا ہے جس میں ان کا کہنا ہے کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کے لیے قائم کردہ اسلامی اتحاد میں مسقط بھی شمولیت کا اعلان کرتا ہے۔شہزادہ محمد بن سلمان نے سلطنت آف اومان کی جانب سے اسلامی عسکری اتحاد میں شمولیت اور سعودی عرب کی قیادت میں دہشت گردی کے خلاف جنگ کا حصہ بننے کا خیر مقدم کیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ سلطنت اومان کی شمولیت سے اسلامی عسکری اتحاد مزید موثر اور نتیجہ خیز انداز میں اپنا سفر جاری رکھے گا۔