Cloud Front
Imran Khan

افسوس ہے کہ پانامہ کیس سننے کے بجائے سابق چیف جسٹس چھٹیوں پر چلے گئے، عمران خان

سابق چیف جسٹس نے پانامہ کیس کا فیصلہ نہیں کیا ، عمران خان
افسوس ہے کہ پانامہ کیس سننے کے بجائے سابق چیف جسٹس چھٹیوں پر چلے گئے ، نواز شریف کا پانامہ کیس سے بچنا اب ممکن نہیں ہے، بانی ایم کیو ایم سے چھٹکارہ ملنے پر کراچی والوں کو شکرانے کے نوافل پڑھنے چاہئیں ، نجی ٹی وی سے گفتگو

کراچی : چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے کہا ہے کہ سابق چیف جسٹس نے پانامہ کیس کا فیصلہ نہیں کیا ، افسوس ہے کہ پانامہ کیس سننے کے بجائے سابق چیف جسٹس چھٹیوں پر چلے گئے ، نواز شریف کا پانامہ کیس سے بچنا اب ممکن نہیں ہے ۔

جمعہ کے روز نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین تحریک انصاف عمران خان نے کہا کہ کراچی میں امن بحال ہو رہا ہے اور اگر کراچی والوں کو بانی متحدہ قومی موومنٹ الطاف حسین سے چھٹکارہ ملتا ہے تو انہیں شکرانے کے نوافل پڑھنے چاہئیں ۔ انہوں نے کہا کہ افسوس ہے کہ سابق چیف جسٹس نے پانامہ کیس سننے کے بجائے سابق چیف جسٹس چھٹیوں پر چلے گئے ،سابق چیف جسٹس نے پانامہ کیس کا فیصلہ نہیں کیا ، نواز شریف کا پانامہ کیس سے بچنا اب ممکن نہیں ہے

یک نکاتی ایجنڈے پر تما م سیاسی جماعتیں آصف زرداری کی سربراہی میں اکٹھی ہو سکتی ہیں،عمران خان
مولانا کا نعرہ ہے ’’ رقم بڑھاؤ نواز شریف ہم تمہارے ساتھ ہیں‘‘ ان کے ہوتے ہوئے یہودیوں کی سازش کی ضرورت نہیں
آصف زرداری اور بلاول کے حلقوں میں تحریک انصاف بھر پور حصہ لے گی،چیئرمین تحریک انصاف

کراچی: پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ پاناما لیکس کے ایک نکاتی ایجنڈے پر آصف علی زرداری کی سربراہی میں اپوزیشن جماعتیں اکھٹی ہوسکتی ہیں۔کراچی میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ اسحاق ڈارنے کالادھن سفید کرنے کی سکیمیں بنائیں جبکہ نوازشریف اپنا پیسہ بنانے کے لیے ملک تباہ کررہے ہیں، پیسہ بنانے کے لیے حکمران ملک کو کھوکھلا کر رہے ہیں اور کرپشن ملک کو دیمک کی طرح چاٹ رہی ہے لہذا کرپشن کرنے والوں کا احتساب ہونا چاہیے، پاناما کیس پاکستان کے مستقبل کی جنگ ہے اور ہمیں اس کو جیتنا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ مولانا فضل الرحمان کے ہوتے ہوئے یہودیوں کی سازش کی ضرورت نہیں جبکہ رقم بڑھاؤ نواز شریف میں تمہارے ساتھ ہوں فضل الرحمان کا نعرہ ہے۔ عمران خان نے مزید کہا کہ پاناما لیکس کے ایک نکاتی ایجنڈے پر آصف علی زرداری کی سربراہی میں اپوزیشن جماعتیں اکھٹی ہوسکتی ہیں اور تحریک انصاف پاناما لیکس پر پیپلز پارٹی سے بات کرسکتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ 2013 کے الیکشن میں تحریک انصاف کو کراچی سے 8 لاکھ ووٹ ملے،آئندہ الیکشن میں کراچی سے بھرپور حصہ لیں گے اورمیں اب کراچی کے لگاتار دورے کروں گا جبکہ آصف زرداری اور بلاول بھٹو کے حلقوں سے بھی الیکشن لڑیں گے۔