Cloud Front
UNO

انسانی حقوق کے ایلچی برائے میانمارملک میں جاری تشددکی تحقیقات کریں گی، اقوام متحدہ

یانگون: اقوام متحدہ نے کہاہے کہ ان کے انسانی حقوق کے ایلچی برائے میانمارملک میں جاری تشددکی تحقیقات کریں گی،جس میں روہنگیامسلمانو ں کے خلاف جاری کریک ڈاؤن بھی شامل ہے ۔وہ اس مقصدکیلئے اگلے ہفتے میانمارکادورہ کررہی ہیں ۔اقوام متحدہ کی خصوصی ایلچی یانگہی لی اپنے بارہ روزہ دورے میں جس کاآغازپیرسے ہوگاکیچن ریاست بھی جائیں گی،جہاں نسلی باغیوں اورفوج کے درمیان جاری لڑائی کے نتیجے میں ہزاروں افرادبے گھرہوگئے ہیں ۔

میانمارکی فوج اورنسلی اقلیتوں کے درمیان جھڑپوں میں اضافے کے بعدآنگ سانگ سوچی کاملک میں امن لانے کے عزم کونقصان پہنچاہے ،جس کااظہارانہوں نے گزشتہ مارچ میں اپنی جماعت کے برسراقتدارآنے کے بعدکیاتھا۔نوبل انعام یافتہ رہنماکوشمالی ریاست راکھین میں رونگیادیہاتیوں کے خلاف کئی ماہ سے جاری فوجی کریک ڈاؤن روکنے میں ناکامی پرشدیدعالمی تنقیدکابھی سامناہے ۔ریاست راکھین میں اکتوبرسے کئی علاقے محصورہوگئے ہیں ،جس کے نتیجے میں ہزاروں رونگیامسلمان بنگلہ دیش فرارہوگئے ہیں ۔لی نے اس لاک ڈاؤن کوناقابل تسلیم قراردیتے ہوئے اس کی مذمت کی ہے اورانہوں نے فوج کے ہاتھوں مسلم اقلیت کے خواتین کے ساتھ جنسی زیادتی ہونے ،اقلیتی افرادکے قتل اورعام شہریوں پرتشددکے دعوؤں کی تحقیقات کامطالبہ کیاہے ۔فوج ان الزامات کی سختی سے تردیدکرتی ہے ۔