Cloud Front
indian army

انڈین آرمی اور بی ایس ایف کے 300 سے زائد جوان ذہنی طور پر مفلوج

بھارت کے مختلف پاگل خانوں میں زیر علاج ہونے کا انکشاف

لندن ؍مظفرآباد : مقبوضہ کشمیر میں تعینات بی ایس ایف اور آرمی کے جوانوں میں شدید پریشانی اچھا کھانا او ر شراب نہ ملنے پر متحدہ فوجیوں نے اپنے افسرانوں کو شوٹ کرنے کے علاوہ جبر ا فوج سے بھاگنے کے واقعات منظر عام پر آ گئے مقبوضہ کشمیر میں تعینات عرصہ دراز سے انڈین آرمی اور بی ایس ایف29بٹالوین کے 300سے زائد جوان ذہنی طور پر مفلوج ہوکر بھارت کے مختلف پاگل خانوں میں زیر علاج ہیں جبکہ 1سو سے زائد جوانوں نے خو دکشی کی جبکہ ایک درجن سے زائد اپنے افسرانوں کو تنگ آکر شوٹ کرنے کے بعد خودکشی کرنے کے واقعات کے علاوہ بھارتی آرمی میں خواتین فوجیوں کو اعلیٰ افسران کی جانب سے ہراساں کرنے کے بھی کیس سامنے آئیں ہیں انسانی حقوق کی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل کی رپورٹ کے مطابق مقبوضہ کشمیر میں تعینات بھارتی افواج کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے جہاں ایک رپورٹ کے مطابق بھارتی افواج کے جوانوں کو مختلف لائن آف کنٹرول اور برف پوش وادی میں چوکیوں میں تعینات کر رکھا ہے

جہاں ان کو کھانا تین وقت کے بجائے 2وقت وہ بھی ناقص غذا دی جارہی ہے جبکہ سردیوں سے بچنے کے لئے نہ اعلیٰ کوالٹی کی شراب اور نہ ہی کوئی موثر غذ ا دی جاتی ہے جس کے باعث مقبوضہ کشمیر میں بھارت کا عام فوجی تعیناتی کو سزا سمجھ کر قبول کرتے ہیں کیونکہ مقبوضہ کشمیر میں کشمیری عوام کو مشکلات سے زیادہ بھارتی افواج کو مشکلات کا سامنا ہے جس میں بھارتی افواج کے 300سے زائد جوان جس میں بی ایس ایف 29بٹالوین کے بھی جوان شامل ہیں اس وقت میڈیا اور دیگر اداروں سے خفیہ رکھ کر بھارت کے مختلف پاگل خانوں میں یہ جوان زیر علاج ہیں جو ذہنی طور پر پاگل ہوچکے ہیں جبکہ ان کے خاندانوں کو حکومتی امداد نہ کرنے پر ان کا خاندان بھار ت کے مختلف شہروں میں کمسری کی زندگی گزار نے پر مجبور ہے جبکہ گزشتہ عرصے میں بھارتی افواج نے 12سے زائد فوجیوں نے ذہنی توازن کھو جانے کے باعث اپنی یونٹ کے جوانوں اور افسرانوں پر فائر کھول دئیے تھے

جس میں ایک میجر صو بیدار اور کیپٹن سمیت 35جوان ہلاک ہوئے جن کا الزام مقبوضہ کشمیر میں جاری تحریک میں ملوث جماعتوں پر ڈال دیا رپورٹ کے مطابق مقبوضہ وادی میں تعینات انڈین آرمی نے خواتین فوجیوں کو اعلیٰ افسران ہراساں کرنے کے علاوہ جنسی زیادتی میں بھی ملوث ہیں جس میں 50سے زائد کنوار ی ناری ماں بننے کے بعد واپس فوج کو خیر آباد کہہ گئی بھارت جہاں جمہوریت کا سب سے بڑا علمبردار ہے وہاں وہ اپنی اور اپنی فوج کے ساتھ بھی مخلص نہیں انسانی حقوق کی شدید خلاف ورزی میں ملوث ہیں ایمنسٹی انٹرنیشنل نے مزید انکشاف کیا ہے کہ بھارت کے خلاف اقوام متحدہ کو نوٹس لینا چاہئے جبکہ بھارت اپنے گناہوں سے پردہ اٹھانے کے ڈر سے انسانی حقوق کی تنظیموں کو مقبوضہ کشمیر میں جانے سے روک رہا ہے جو کہ عالمی قوانین کے بھی خلاف ہے