Cloud Front
Aitzaz Ahsan

پانامہ کیس میں شریف خاندان بینکنگ ریکارڈ پیش نہیں کرسکا، اعتزاز احسن

سپریم کورٹ یہ کبھی نہیں مانے گی کہ شریف خاندان کا کاروبار30سال تک کیش پر چلتا رہا
شریف خاندان کے پاس منی ٹریل نہیں دے سکا اس لئے کیس کی باتیں کر رہا ہے،عدالت کو مطمئن ہو جانا چاہئے کہ شریف خاندان کے پاس منی ٹریل نہیں ہے،نجی ٹی وی کو انٹرویو

اسلام آباد: پاکستان پیپلزپارٹی کے رہنما سینیٹر اعتزاز احسن نے کہا ہے کہ پانامہ کیس میں شریف خاندان بینکنگ ریکارڈ پیش نہیں کرسکا،سپریم کورٹ یہ کبھی نہیں مانے گی کہ شریف خاندان کا کاروبار30سال تک کیش پر چلتا رہا،شریف خاندان کے پاس منی ٹریل نہیں دے سکا اس لئے کیس کی باتیں کر رہا ہے،عدالت کو مطمئن ہو جانا چاہئے کہ شریف خاندان کے پاس منی ٹریل نہیں ہے۔ان خیالات کا اظہار سینیٹر اعتزاز احسن نے اتوار کے روز نجی ٹی وی کو انٹرویو دیتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ جرم سے فائدہ اٹھانے والا بھی مجرم ہوتا ہے،اگر باپ چوری کا پیسہ بیٹے کو وراثت میں دے تو وہ بیٹے کا نہیں ہو جاتا،میاں شریف نے30سال تک کاروبار کیا اور ٹیکس نہیں دیا تو کاروبار قانونی نہیں ہوگا۔انہوں نے کہا کہ قطری شہزادے کے خط کی کوئی حیثیت نہیں،قطری شہزادے کے خط کے بعد اس کی ٹانگیں نہیں کانپیں گی بلکہ ہارٹ اٹیک ہوگا،شریف خاندان کے بیان حلفی کی بھی کوئی حیثیت نہیں،عدالت شریف خاندان کا بیان حلفی مان لے تو پاکستان میں بیان حلفی سے متعلق نیا قانون وضع کرنا ہوگا،معلوم نہیں شریف خاندان کو اتنی چھوٹ کیوں دی جارہی ہے