Cloud Front
Ishaq Dar

اسحاق ڈار سے بندوق کی نوک پر لئے گئے بیان کی کوئی اہمیت نہیں ، مسلم لیگ (ن)

حدییبیہ پیپرز مل ایک گڑھا مردہ ہے جسے تحریک انصاف والے کھود کر جشن منانا چاہتے ہیں
پی ٹی آئی نے شریف فیملی پر جو بھی الزام لگائے ہم نے ہر الزام کا ثبوتوں کے ساتھ مقابلہ کیا ،اب پانامہ کیس بالکل ختم ہو چکا ہے، عمران خان جان لیں عدالت میں ردی کے ٹکڑے نہیں بلکہ ثبوت دینے ہوتے ہیں، وزیر مملکت انوشہ رحمن ، دانیال عزیز اور مائزہ حمید کی سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو

اسلام آباد: مسلم لیگ (ن)کے رہنماؤں نے کہا ہے کہ اسحاق ڈار سے بندوق کی نوک پر لئے گئے بیان کی کوئی اہمیت نہیں ،حدییبیہ پیپرز مل ایک گڑھا مردہ ہے جسے تحریک انصاف والے کھود کر جشن منانا چاہتے ہیں،پی ٹی آئی نے شریف فیملی پر جو بھی الزام لگائے ہم نے ہر الزام کا ثبوتوں کے ساتھ مقابلہ کیا ،اب پانامہ کیس بالکل ختم ہو چکا ہے، عمران خان جان لیں عدالت میں ردی کے ٹکڑے نہیں بلکہ ثبوت دینے ہوتے ہیں۔سپریم کورٹ کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر مملکت برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی انوشہ رحمن نے کہا کہ حدیبیہ پیپرز مل نے قرضے کی ایک ایک پائی واپس کردی تھی اوراس میں کوئی سرکاری رقم شامل نہیں تھی ،

یہ لین دین دو بنکوں کے درمیان ہوا تھا ۔انہوں نے کہاکہ 1999ء کے شب و خون مار نے سے پہلے رقم واپس کردی گئی تھی جو ریکارڈ ہمارے پاس موجود ہے ،اسحاق ڈار کے حوالے سے بیان کی کوئی حیثیت نہیں بندوق کی نوک پر کوئی بھی بیان نہیں لیا جاسکتا ، اٹک میں دیئے گئے بیان کی کوئی اہمیت نہیں ہے ، تحریک انصاف والوں نے پہلے نوازشریف کو نشانہ بنایا ، پھر مریم نواز اور اب ان کی توپوں کا رخ اسحاق ڈار کی جانب ہے ، حدیبیہ پیپرز مل کا کیس کئی سال تک چلتا رہا ، حدییبیہ پیپرز مل کو تیرہ ججوں کو ختم کیا اور یہ ایک گڑھا مردہ ہے جسے تحریک انصاف والے کھود کر جشن منانا چاہتے ہیں ،1999ء میں آمریت کے دور میں کیا کچھ نہیں ہوا یہ سب جانتے ہیں اور آمریت کے اثرات 1999ء سے 2007ء تک ہوتے ہوئے دکھائی دیئے،پرویز مشر ف نے جو ہمارے ساتھ جو سلوک کیا وہ قابل مذمت ہے ۔انہوں نے مزید کہاکہ عمران خان کو اگر اٹک قلعہ میں آدھا گھنٹہ گزارنا پڑے تو پھر پوچھیں گے ،

آمریت میں دور آمریت میں ججوں بھی نظر بند کردیا گیا تھا ، ڈکٹیٹر اگر عمران خان کی گردن پر بندوق رکھے تو اس وقت عمران خان کو پتہ چلے گا کہ بیان کیسے دیتے ہیں ، کنٹینر پر کھڑے ہو کر ناچ گانا کرنا سیاست نہیں بلکہ بچگانہ فعل ہے ۔۔ انہوں نے کہاکہ ہمیں عدالت سے انصاف کی پوری امید ہے اور توقع ہے کہ عدالت بہت جلد پانامہ کیس کا فیصلہ نوازشریف کے حق میں سنائے گی۔اس موقع پر مسلم لیگ (ن) کے رہنما دانیال عزیز نے کہا کہ حیرانگی ہے کہ پی ٹی آئی نے شریف فیملی پر جو بھی الزام لگائے ہم نے ہر الزام کا ثبوتوں کے ساتھ مقابلہ کیا ہے اور اب پانامہ کیس بالکل ختم ہو چکا ہے ، تحریک انصاف صرف جھوٹ کے مردے قبروں سے اٹھا کر نکال رہی ہے جو کہ انہوں نے پارلیمنٹ ہاؤس میں بھی نکالے تھے ، اسحاق ڈار نے خود بیان کو غلط قراردیا ہے اسی نعیم بخاری کو عمران خان نے کہا تھا کہ بندوق کی نالی پر بیان لیا گیا ہے ، جہانگیر ترین نے جو بیان جمع کرایا اس میں بھی اس نے اعتراف کیا کہ میں نے منافع کمایا ہے ،

عمران خان نے خود کالے دھن کو سفید کر نے کے لئے 2000ء میں قانون بنایا لیکن اب پاکستانی عوام کو سوچنا ہو گا کیونکہ تحریک انصاف کو پانامہ کیس میں مکمل طور پر شکست ہو چکی ہے اور اب یہ قوم کے ذہنوں کیساتھ کھیل رہے ہیں ۔مسلم لیگ (ن) کی رکن قومی اسمبلی مائزہ حمید نے کہاکہ عمران خان نے گزشتہ روز جلسی میں پانامہ پیپرز بیچنے کی کوشش کی جس سے ثابت ہوتا ہے کہ پانامہ کیس میں اب کچھ بھی باقی نہیں رہا ، انہوں نے عمرا ن خان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ عدالت میں ردی کے ٹکڑے نہیں بلکہ ثبوت دینے ہوتے ہیں