Cloud Front
Anglina

معروف اداکا رہ انجلینا جولی بھی ٹرمپ احکامات کے خلاف

مذہب کے نام پر امتیاز برتنا آگ سے کھیلنے کے مترادف ہے،ٹرمپ کے احکا ما ت سے شدت پسندی کو ہوا اورغیرمحفوظ مہاجرین کے جذبات مجروح ہوں گے ، انجلینا جولی

نیو یا رک : معروف ہولی وڈ اداکارہ اور انسانی حقوق کے لیے سرگرم کارکن انجلینا جولی بھی امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے متنازع ایگزیکٹیو آرڈر کے خلاف بول پڑیں۔آسکر ایوارڈ یافتہ اداکارہ نے نئے امریکی صدر کی جانب سے 7 مسلم ممالک سے تعلق رکھنے والے افراد پر عائد کی جانے والی سفری پابندی کو ‘شدت پسندی کو ہوا دینے’ کے مترادف قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس سے غیرمحفوظ مہاجرین کے جذبات مجروح ہوں گے۔اقوام متحدہ کے ہائی کمشنر برائے مہاجرین کی خصوصی سفیر انجلینا جولی نے ڈونلڈ ٹرمپ کا نام لیے بغیر ان کے اقدامات پر تنقید کی۔امریکی اخبار نیو یارک ٹائمز میں شائع ہونے والے ایک تجزیاتی مضمون میں اداکارہ کا کہنا تھا کہ مذہب کے نام پر امتیاز برتنا آگ سے کھیلنے کے مترادف ہے۔

انجلینا جولی کا مزید کہنا تھا کہ 6 بچوں کی والدہ ہونے کے حیثیت سے جو ‘غیر ملکی زمینوں پر پیدا ہوئے مگر فخر سے امریکا کے شہری ہیں’، ان کا ماننا ہے کہ کسی قوم کے تحفظ کے لیے فیصلے حقائق کی بنیاد پر کرنے چاہئیں، خوف کی بنیاد پر نہیں۔انھوں نے مزید لکھا، ‘میں جاننا چاہتی ہوں کہ مہاجرین بچے جو پناہ حاصل کرنا چاہتے ہیں، کیا انہیں امریکا سے درخواست کرنے کا حق حاصل ہے اور کیا امریکا کی سیکیورٹی لوگوں اور معصوم بچوں پر پابندی عائد کیے بغیر ممکن نہیں؟’انجلینا جولی نے ان خیالات کا اظہار بھی کیا کہ مسلمانوں کے تحفظ کو کم اہمیت دینے کا مطلب شدت پسندی کو ہوا دینا ہے۔