Cloud Front

قومی کھلاڑی پی سی بی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کیوں کرتے ہیں ؟

پی ایس ایل میں اسلام آباد یونائیٹڈ کے شرجیل خان اور خالد لطیف معطل ، ایونٹ سے باہر
پی سی بی نے پی ایس ایل کو کرپشن سے پاک رکھنے اور کرکٹ کے کھیل کی ساکھ کو برقرار رکھنے کے لیے یہ اقدام اٹھایا، وطن واپس بھیج دیا گیا ہے ، پی سی بی

انٹر نیشنل سینڈیکیٹ اس پر کام کررہا تھا،دونوں کی حرکتوں کو مشکوک پایا گیا ہے، دونوں کی گہری دوستی ہے بقیہ میچز نہیں کھیل سکیں گے ، ترجمان

دونوں کھلاڑیوں نے مشکوک افراد سے ملنے کا اعتراف کرلیا ہے،دونوں نے پشاور زلمی سے میچ کے بعد ہوٹل کی لابی میں ملاقات کی ہے، سکیورٹی چیف محمد اعظم نے تصدیق کردی
کیس کے حوالے سے فی الحال کوئی تبصرہ کرنا مناسب نہیں، تاہم یہ تحقیقات کرکٹ کے کھیل کو کرپشن سے پاک رکھنے کے ہمارے عزم کا عملی مظاہرہ ہے، نجم سیٹھی

دبئی : پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے اینٹی کرپشن کوڈ کے تحت اسلام آباد یونائیٹڈ کے شرجیل خان اور خالد لطیف کو معطل کرکے ایونٹ سے باہر کردیا۔پی سی بی نے دونوں کھلاڑیوں کو اینٹی کرپشن کوڈ کی مبینہ خلاف ورزی کی تحقیقات کی حصے کے طور پر عبوری طور پر معطل کیا۔پی سی بی کا کہنا ہے کہ مزید تحقیقات کی جائیں گی،انٹر نیشنل سینڈیکیٹ اس پر کام کررہا تھا،دونوں کی حرکتوں کو مشکوک پایا گیا ہے، دونوں کھلاڑی اسلام آباد یونائیٹڈ کی طرف سے کھیل رہے ہیں،پی سی بی نے دونوں کھلاڑیوں کے خلاف یہ اقدام پی ایس ایل ٹو کے فتتاحی میچ کے بعد اٹھایا ہے،دونوں کو ملک واپس روانہ کردیا گیا ہے،بتایا جاتا ہے کہ دونوں کی آپس میں گہری دوستی ہے،یہ دونوں بقیہ میچز میں شرکت نہیں کرسکیں گے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ دونوں کھلاڑیوں نے مشکوک افراد سے ملنے کا اعتراف کرلیا ہے،دونوں نے پشاور زلمی سے میچ کے بعد ہوٹل کی لابی میں ملاقات کی ہے،

ان کا کہنا ہے کہ ماضی میں بھی ان افراد سے ملتے رہے ہیں،سیکیورٹی چیف کرنل اعظم نے اس بات کی تصدیق کی ہے۔پی سی بی ذرائع کا کہنا ہے کہ دونوں کھلاڑیوں کے خلاف تحقیقات کی جارہی ہیں،دونوں مشکوک سرگرمیوں میں پائے گئے ہیں،بورڈ نے یہ اقدام اسلام آباد یونائیٹڈ ٹیم کی انتظامیہ سے مشاورت کے بعد یہ قدم اٹھایا ہے۔بیان کے مطابق پی سی بی نے پاکستان سپر لیگ (پی ایس ایل) کو کرپشن سے پاک رکھنے اور کرکٹ کے کھیل کی ساکھ کو برقرار رکھنے کے لیے یہ اقدام اٹھایا، جبکہ تحقیقات میں انٹرنیشل کرکٹ بورڈ (آئی سی سی) بھی کرکٹ بورڈ کو تعاون فراہم کر رہا ہے۔اقدام کے حوالے سے پی ایس ایل کے چیئرمین نجم سیٹھی کا کہنا تھا کہ ’کیس کے حوالے سے فی الحال کوئی تبصرہ کرنا مناسب نہیں، تاہم یہ تحقیقات کرکٹ کے کھیل کو کرپشن سے پاک رکھنے کے ہمارے عزم کا عملی مظاہرہ ہے۔‘انہوں نے کہا کہ ’ہم کھلاڑیوں کی کسی کرپٹ سرگرمی کو برداشت نہیں کریں گے اور تحقیقات کے آگے بڑھنے پر مزید فیصلہ کن کارروائی کرنے سے نہیں ہچکچائیں گے۔