Cloud Front
SUprem Court

سرکاری اداروں کی جانب سے نجی وکیل کرنے پر پابندی

وفاقی حکومت نے سپریم کورٹ کے فیصلے کیخلاف نظر ثانی اپیل دائر کردی

اسلام آباد : وفاقی حکومت نے سرکاری اداروں کی جانب سے نجی وکیل کرنے پر پابندی سے متعلق سپریم کورٹ کے فیصلے کیخلاف نظر ثانی اپیل دائر کر دی ہے ، پیر کے روز سپریم کورٹ میں دائر کی گئی درخواست میں وفاقی حکومت نے موقف اختیار کیا ہے کہ نجی وکیل کی خدمات حاصل کرنا انتظامی فیصلہ ہوتا ہے ،سرکاری اداروں پر نجی وکیل کی خدمات حاصل کرنے پر پابندی نہیں لگائی جا سکتی ،

درخواست میں مزید کہا گیا ہے کہ وفاقی اور صوبائی حکومتوں کا آئینی تشریح کے معاملے پر موقف نہیں سنا گیا ہے ،سرکاری اداروں کی جانب سے نجی وکیل کی خدمات کو لاء آفیسر کے سرٹیفکیٹ سے مشروط نہ کیا جائے ، درخواست میں عدالت عظمیٰ سے استدعا کی گئی ہے کہ سپریم کورٹ عدالتی فیصلے پر نظر ثانی کرے ۔ واضح رہے کہ سپریم کورٹ نے تمام سرکاری اداروں پر سرکاری مقدمات میں نجی وکیل کرنے پر پابندی عائد کر رکھی ہی جس کے بعد سینئر ایڈووکیٹ مخدوم علی خان وزارت داخلہ سمیت سندھ حکومت کی وکالت سے دستبردار ہو چکے ہیں ۔