Cloud Front
Saqib Nisar

غیر معیاری گھی فروخت کر نے کی اجازت نہیں دیں گے، چیف جسٹس سپریم کورٹ

عدالت نے یوٹیلیٹی سٹورز پر معیار پر اترنے والے گھی کی فروخت کی اجازت دیدی
چترال ڈویژن میں گھی سے متعلق رپورٹ آئندہ سماعت پر طلب ،مزید سماعت غیر معینہ مدت تک ملتوی

اسلام آباد : چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار نے یوٹیلیٹی اسٹورز پر غیر معیاری گھی کی فروخت سے متعلق از خود نوٹس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیئے کہ عدالت کو غیر معیاری گھی کی فروخت پر تشویش ہے، ملک میں غیر معیاری گھی فروخت کر نے کی اجازت نہیں دی جاسکتی، استعمال شدہ گھی کی فروخت کو روکنا حکومت کی ذمہ داری ہے، منگل کو چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے کیس کی سماعت کی،مقدمہ کی سماعت شروع ہوئی تھی یوٹیلیٹی سٹورز کے وکیل بے عدالت کو بتایا کہ یوٹیلیٹی سٹورز پر فروخت ہونے والے گھی کی 51 نمونے لیے گئے اور 45 گھی کے نمونے انسانی صحت کیلئے موزوں قرار دیئے گئے ہیں، چھ کمپنیوں کے گھی کے نمونوں کا معیار تھوڑا کم ہے، معیار پر پورا نہ اترنے والے گھی کو انکی کمپنیوں کو واپس کر دیا جائیگا، جبکہ چترال ڈویژن میں برفباری کے باعث یوٹیلٹی سٹورز پر فروخت ہونے والے گھی کی لیبارٹری جانچ پڑتال نہیں ہو سکی،

بڑے فوڈ چینز استعمال شدہ گھی آگے فروخت کر دیتے ہیں جو پکوڑے، سموسے، مچھلی فرائی کرنے والے استعمال کرتے ہیں، استعمال شدہ گھی انسانی صحت کیلیے انتہائی نقصان دہ ہے، اس پر عدالت نے معاملے کا نوٹس لے لیا جبکہ چیف جسٹس ثاقب نثار نے ریمارکس دیئے کہ ہماری تشویش غیر معیاری گھی کی فروخت پر ہے، ملک غیر معیاری گھی کی فروخت کی اجازت نہیں دی جا سکتی، استعمال شدہ گھی کی فروخت کو روکنا حکومت کا کام ہے، استعمال شدہ گھی کی فروخت کو روکنے کیلئے حکومت نے کیا اقدامات کیے ہیں، چیف جسٹس کا کہنا تھا کہ استعمال شدہ گھی کے استعمال کے معاملے پر متعلقہ فوڈ اتھارٹیز کو طلب کیا جا سکتا ہے، اس موقع پر ابھی کوئی افراتفی پیدا نہیں کرنا چاہتے، استعمال شدہ گھی، چائینہ نمک، تیٹرا پیک دودھ اور پلاسٹک بوٹل واٹر کا آئندہ سماعت پر جائزہ لیں گے، عدالت نے یوٹیلٹی اسٹورز کو معیار پر پورا اترنے والے گھی کی فروخت کی اجازت دیتے ہوئے چترال ڈویژن میں یوٹیلیٹی اسٹورز پر فروخت ہونے والے گھی سے متعلق رپورٹ آئندہ سماعت پر پیش کرنے کا حکم دیدیا، سپریم کورٹ نے از خود نوٹس کیس میں سلمان اکرم راجہ کو عدالتی معاون مقرر کرتے ہوئے کیس کی سماعت غیر معینہ مدت کیلئے ملتوی۔