Cloud Front

کئی امریکی صحافیوں کو وائٹ ہاؤس کی غیر رسمی بریفنگ سے نکال دیا گیا

وائٹ ہاؤس جعلی خبروں کے بیانیے کے خلاف جارحانہ طور پر اقدامات اٹھا رہا ہے،
وائٹ ہاؤس پریس سیکرٹری

واشنگٹن : وائٹ ہاؤس سے کئی اہم براڈکاسٹرز اور اخبارات کو غیر رسمی بریفنگ سے خارج کر دیا گیا ہے جبکہ من پسند صحا فیوں کو وہائٹ ہاؤس کے بڑے بریفنگ روم کے بجائے چھوٹے دفتر میں بریفنگ دی گئی۔ ان براڈ کاسٹرز اور اخبارات کو وائٹ ہاؤس کے پریس سیکریٹری شون سپائسر کی غیر رسمی بریفنگ سے خارج کیے جانے کا کوئی جواز نہیں دیا گیا۔ یہ ایسے وقت میں ہوا ہے جب صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے ایک تقریر کے دوران میڈیا پر تنقید کی اور کہا کہ ‘جعلی خبریں’ لوگوں کی ‘دشمن’ ہیں۔اس سے قبل انھوں نے سی این این اور نیو یارک ٹائمز کو کو تنقید کا نشانہ بنایا تھا۔

جمعہ کو صدر ٹرمپ کی تقریر کے بعد چند میڈیا تنظیموں کو شون سپائسر کے دفتر میں غیر رسمی بریفنگ کے لیے بلایا گیا تھا جس کو ‘گیگل’ کہا جاتا ہے۔ واضح رہے کہ اوباما انتظامیہ نے گیگل سے فوکس نیوز کو خارج کرنے کی کوشش کی تھی۔ شون سپائسر سے جب پوچھا گیا کہ چند کو کیوں مدعو کیا گیا جبکہ چند کو نہیں تو انھوں نے کہا کہ یہ فیصلہ ‘رپورٹرز کے پول کو وسیع’ کرنے کے لیے لیا گیا ہے۔انھوں نے مزید کہا کہ وائٹ ہاؤس جعلی خبروں کے بیانیے کے خلاف جارحانہ طور پر اقدامات اٹھا رہا ہے۔ واضح رہے کہ صدر بننے کے بعد بھی ڈونلڈ ٹرمپ مسلسل میڈیا کو تنقید کا نشانہ بنارہے ہیں۔