Cloud Front
Ishaq Dar

فوجی عدالتوں کی 2سال توسیع پر پیپلز پارٹی راضی ہو گئی ہے، اسحاق ڈار

فوجی عدالتوں کی توسیع کا بل آج پارلیمنٹ میں پیش کیاجائے گا ،نیشنل ایکشن پر بڑی محنت ہوئی ہے فوجی عدالتیں وقت کی اہم ضرورت ہیں، وزیر خزانہ

اسلام آباد : وفاقی وزیر داخلہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ فوجی عدالتوں کی 2سال توسیع پر پیپلز پارٹی راضی ہو گئی ہے۔ فوجی عدالتوں کی توسیع کا بل آج (بروز جمعہ) پارلیمنٹ میں پیش کیا جائے گا۔ جمعرات کے روز نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا کہ نیشنل ایکشن پر بڑی محنت ہوئی ہے فوجی عدالتیں وقت کی اہم ضرورت ہیں۔ پیپلز پارٹی فوجی عدالتوں میں 2سال کی توسیع پر رضامند ہو گئی ہے۔ فوجی عدالتوں پر بل جمعہ کے روز اسمبلی میں پیش کیا جائے گا۔ اسمبلی سے منظوری کے عبد بل سینٹ میں پیش ہو گا۔ اگر کسی کو بل پر اعتراض ہوا تو ترمیم کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے 9میں سے3نکات کو حل کر لیا گیا ہے۔

کوشش ہو گی کہ مولانا فضل الرحمن بھی ہمارے ساتھ رہیں۔ دہشتگردوں کا کوئی مذہب اور شناخت نہیں۔ دہشتگردوں کے خلاف بلا امتیاز کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور افغانستان کو مل کر دہشتگردی کا مقابلہ کرنا ہو گا۔ اگر افغانستان میں امن نہیں ہو گا تو پاکستان میں بھی امن نہیں ہو گا۔ افغان بارڈر پر باڑ لگائی جائے گی۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ ڈان لیکس کافی حساس معاملہ ہے۔ ملکی معاملات پر جب بات ہوتی ہے تو اگلے دن اخبارات میں اسکا چرچا نہیں ہونا چاہیئے۔ توقع ہے ڈان لیکس کمیٹی کی رپورٹ جل آ جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ سعودی عرب کی خواہش ہے کہ سابق آرمی چیف جنرل راحیل شریف 39ملکی فوجی اتحا دکی کمان کریں۔ ایک ریٹائرڈ آرمی چیف39ملکی فوجی اتحاد کو لیڈ کر سکتے ہیں۔ وزیراعظم نواز شریف راحیل شریف بارے جلد فیصلہ کریں گے۔ امید ہے راحیل شریف کو 39ملکی اتحاد کی کمان کرنے کی اجازت مل جائے گی۔ اسحاق ڈار نے کہا کہ پانامہ کیس کا جو بھی فیصلہ ہو گا قبول کریں گے۔ عدالت فوٹو کاپیوں اور خواہشات پر فیصلہ نہیں کرتی بلکہ ثبوتوں کی بنیاد پر فیصلہ کرتی ہے۔ امید ہے پانامہ کیس کا فیصلہ اچھا آئے گا۔