Cloud Front

ٹریننگ کیمپ میں طلب کیا گیا تو ایسا لگا جیسے نئی زندگی مل گئی ، کامران اکمل

قومی ٹیم میں جگہ بنانے کیلئے کیلئے بہت سخت محنت کی، سلیکٹرز کا شکر گزار ہوں ، بیان

لاہور : ڈومیسٹک کرکٹ اور پاکستان سپر لیگ میں عمدہ کارکردگی دکھانے والے تجربہ کار وکٹ کیپر بلے باز کامران اکمل نے ویسٹ انڈیز کے خلاف سیریز کیلئے ٹریننگ کیمپ میں طلب کیے جانے کو انٹرنیشنل کرکٹ میں نئی زندگی ملنے سے تعبیر کیا ہے۔کامران اکمل نے کہا کہ یہ میرے نئی زندگی جیسا ہے اور میرے انٹرنیشنل کیریئر کیلئے امید کی نئی کرن ہے۔ میں نے اس موقع کے حصول اور قومی ٹیم میں جگہ بنانے کیلئے کیلئے بہت سخت محنت کی اور کیمپ کیلئے منتخب کرنے پر میں سلیکٹرز کا شکر گزار ہوں۔ آخری مرتبہ اپریل 2014 میں بنگلہ دیش میں منعقدہ ورلڈ ٹی20 میں قومی ٹیم کی نمائندگی کرنے والے کامران اکمل نے قائد اعظم ٹرافی میں عمدہ کھیل پیش کرتے ہوئے پانچ سنچریوں کی مدد سے ایک ہزار سے زائد رنز بنائے تھے

اور ایونٹ کے سب سے کامیاب بلے باز رہے تھے اور پھر نیشنل ون ڈے کپ میں بھی اس فارم کا سلسلہ برقرار رکھتے ہوئے دو سنچریاں اسکور کیں۔حال ہی میں پاکستان سپر لیگ میں بھی وکٹ کیپر بلے باز کی عمدہ کارکردگی کا سلسلہ جاری رہا اور ایونٹ کی واحد سنچری بنانے والے کامران 353 رنز کے ساتھ سب سے کامیاب بلے باز اور 12 کیچوں کے ساتھ سب سے بہترین وکٹ کیپر بھی قرار پائے۔انہوں نے کہا کہ دومیسٹک کرکت میں عمدہ کھیل پیش کرنے کے بعد میں پی ایس ایل میں بھی عمدہ کارکردگی کیلئے بے چین تھا اور میں اس کارکردگی کا سہرا کپتان ڈیرن سیمی اور کوچ محمد اکرم کے سر باندھتا ہوں جنہوں نے مجھے اوپر کے نمبروں پر کھلایا جس کی بدولت میں نے اپنا قدرتی کھیل پیش کیا۔200 سے زائد انٹرنیشنل مقابلوں میں پاکستان کی نمائندگی کا اعزاز رکھنے والے کامران اکمل نے کہا کہ سرفراز احمد اچھی کارکردگی کا مظاہرہ کر رہے ہیں اور کپتان کی موجودگی میں اسپیشلسٹ بلے باز کی حیثیت سے اپنی بہترین کارکردگی دکھانے کی کوشش کروں گا