Cloud Front
Shahryar

میچ فکسنگ میں ملوث کھلاڑیوں کو کوئی رعایت نہیں ملے گی ، شہریار خان

کھلاڑیوں کو پھنسانے کیلئے بکیز نے نئے طریقے نکال لئے مگر جب کوئی پاکستان کی ٹوپی پہن کر نکلتا ہے تو اس پر بہت بڑی ذمہ داری ہوتی ہے ، چےئرمین پی سی بی
ٹیم فٹنس اور فیلڈنگ کی وجہ سے دیگر ٹیموں سے بہت پیچھے رہ گئی کوچ سے کہہ دیا ہے اس پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا ، میڈیا سے گفتگو

لاہور: چیئرمین پی سی بی شہریار خان نے کہا ہے کہ ہماری ٹیم فٹنس اور فیلڈنگ کی وجہ سے دیگر ٹیموں سے بہت پیچھے رہ گئی ہے۔ کھلاڑیوں کی فیلڈنگ اور فٹنس نمبر ون ترجیخ ہے اور بورڈ کی پالیسی ہے کہ اگر کوئی فٹنس کے کم ترین معیار پر پورا نہ اترتا ہو تو اسے قومی ٹیم کیلئے سلیکٹ نہیں کیا جائے گا۔’’کھلاڑیوں کو پھنسانے کیلئے نئے طریقے استعمال ہو رہے ہیں اور پتہ ہے کہ بکیز نے نئے طریقے نکال لیے ہیں‘‘۔ لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انکا کہنا تھا کہ کھلاڑیوں میں سب سے پہلی ترجیخ فٹنس ہے ،

لڑکے سمجھ لیں فٹنس نہیں ہو ئی تو ٹیم میں جگہ نہیں ملے گی۔انہیں ذمہ داری کا مظاہر ہ کرنا چاہیئے۔ قومی ٹیم میں شمولیت کیلئے فٹنس کو معیار بنا دیا ہے اور کوچ سے کہہ دیا ہے کہ فٹنس پر کوئی سمجھوتہ نہ کریں۔ ’’میچ فکسنگ میں ملوث کھلاڑیوں کو رعایت نہیں ملے گی ‘‘۔شہریار خان نے مزید کہا کہ جب بھی کوئی پاکستان کی ٹوپی پہن کر نکلتا ہے تو اس پر بڑی ذمہ داری عائد ہو جاتی ہے۔ دورہ انگلینڈ اسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کے دوران چیئرمینوں کے خط آئے کہ آپکی ٹیم ہارے یا جیتے انکا کنڈکٹ بہت بہتر رہا ہے۔بیرونی دوروں کے دوران ٹیم کے رویے کو بہت صراحا گیا ہے۔ چیئرمین پی سی بی کا کہنا تھا کہ فٹنس اور فیلڈنگ کی وجہ سے دیگر ٹیمیں ہم سے آگے چلی گئی ہیں تاہم اب ہمیں اس پر توجہ دینے کی ضرورت ہے۔ سپاٹ فکسنگ میں ٹربیونل کا فیصلہ قبو ل کریں گے۔