Cloud Front

فوجی عدالتوں کو ناپسندیدہ سمجھتے ہوئے بھی قبول کریں گے، مولانافضل الرحمن

قانون وہ ہو جو امتیازی تو ہو ۔ پانامہ کیس کا فیصلہ جو بھی آئے گا سب کو قبول کرنا چاہیے، گفتگو

اسلام آباد : جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ فوجی عدالتوں کو ناپسندیدہ سمجھتے ہوئے بھی قبول کریں گے۔ قانون وہ ہو جو امتیازی تو ہو ۔ پانامہ کیس کا فیصلہ جو بھی آئے گا سب کو قبول کرنا چاہیے۔ اتوار کے روز نجی ٹی وی سے گفتگو مین جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ فوجی عدالتوں کا معاملہ پارلیمنٹ میں ہے۔ جمہوریت میں فوجی عدالتوں کا کوئی تصور نہیں ، فوجی عدالتوں کو ناپسندیدہ ہوتے ہوئے بھی قبول کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ سیاسی لوگوں کی گرفاریاں کوئی اچھا پیغام نہیں ہے سیاسی لوگوں کو ان کا جائز مقام ملنا چاہیے۔ مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ پانامہ کیس عدالت میں ہے کیس کا جو بھی فیصلہ آئے گا تمام فریقین اسے قبول کریں۔